Home / شہر(City) / مرکزی حکومت کی انٹرنیٹ پر کنٹرول کرنے کی کوشش: اس سمت میں کوئی قدم شخصی آزادی پر بھی حملہ ہوگا: ممتا بنرجی

مرکزی حکومت کی انٹرنیٹ پر کنٹرول کرنے کی کوشش: اس سمت میں کوئی قدم شخصی آزادی پر بھی حملہ ہوگا: ممتا بنرجی

مرکزی حکومت کی انٹرنیٹ پر کنٹرول کرنے کی کوشش

اس سمت میں کوئی قدم شخصی آزادی پر بھی حملہ ہوگا: ممتا بنرجی

 

کولکاتا: مرکزی حکومت کے ذریعہ انٹر نیٹ پر کنٹرول کرنے کی کوششوں پر گہری تشویش کا اظہار کرتے ہوئے آج وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے کہا ہے کہ اگر مرکزی حکومت اس سمت میں کوئی قدم اٹھاتی ہے تو وہ خطرناک ثابت ہوگی اور یہ شخصی آزادی پر بھی حملہ ہوگا۔ ممتا بنرجی نے اپنے فیس بک اکاؤنٹ پر تبصرے کرتے ہوئے لکھا ہے کہ ہمیں ایسی خبر موصول ہوئی ہے کہ بی جے پی حکومت انٹرنیٹ پر نظر رکھنے کیلئے قانون بنانے کی تیاری میں ہے۔ دراصل بی جے پی آزادانہ سوچ اور تنقید سے خوف زدہ ہے اس لیے وہ اس طرح کے اقدامات پر غور کررہی ہے۔
وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے لکھا ہے کہ سوال یہ ہے کہ آخر مودی حکومت سوشل میڈیا سے اس قدر خوف زدہ کیوں ہے، 2014 میں تو سوشل میڈیا پر ہی پروپیگنڈہ کی مدد سے کامیابی حاصل کی تھی مگر آج دوسرے لوگ بھی استعمال کرنے لگے ہیں تو وہ اس پر روک لگانے کی کوشش کررہی ہے۔ انتخابات سے قبل قانون میں تبدیلی کی ضرورت کیوں آن پڑی ہے۔
ممتا بنرجی نے فیس بک پر لکھا ہے کہ بی جے پی والے بولنے پر بھی سنسر لگانا چاہتے ہیں۔ انہیں خوف ہے کہ سوشل میڈیا ہی اب اصل میڈیا بن گیا ہے اور لوگ یہاں پر بے خوف ہوکر اپنی باتیں رکھ رہے ہیں۔ وزیراعلیٰ نے اس قانون کے خلاف تمام سیاسی جماعتوں کو متحد کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا ہے کہ میری تمام سیاسی جماعتوں سے اپیل ہے کہ اس طرح کے قانون کے خلاف سختی سے آواز اٹھائیں۔

ممتا بنرجی نے کہا کہ میں اپنی پارٹی کے اراکین پارلیمنٹ سے بھی کہیں گے کہ وہ پارلیمنٹ میں اس کے خلاف آواز اٹھائیں۔ وزیرا علیٰ ممتا بنرجی نے لکھا ہے کہ ہندوستان کی جمہوریت میں سوشل میڈیا پر سنسر کی کوئی گنجائش نہیں ہے اور ہم عوام کی طاقت ختم نہیں کرنے دیں گے۔

About Sa sagar

Check Also

خبرلیجے زباں بگڑی۔۔۔ اہل زبان کون ہیں،کہاں ہیں؟۔۔۔ 

خبرلیجے زباں بگڑی۔۔۔ اہل زبان کون ہیں،کہاں ہیں؟ گزشتہ شمارے میں عربی کے ایک لفظ …

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے